Easy Treatment for Baldness Prevention




Hair loss from the human body, completely or partially, is called baldness. This deadly disease gradually increases serially. On an average it is estimated that about 100 of our body hair breaks or falls daily. While the average skin of a head has about one million hairs and the average age of each hair is four years. During this period each hair grows about half an inch a month. Usually in the fifth year the hair falls off and then another new hair is replaced in six months.

Hereditary or complete baldness affects men more than women. About twenty-five percent of men start balding at the age of thirty, and about two-thirds of them fall off or become completely bald at the age of fifty-five.

Causes of Baldness:

The following are the causes of hair fall or breakage. 
  1. The first cause of hair fall is age, which means it is a natural process to leave the hair on when it gets old. 
  2. Hormone deficiency can also cause hair loss. 
  3. The hormone in men may not be enough to cause the disease. 
  4. Family or hereditary baldness, which is very common in families and transmitted from parents to offspring through genes. 
  5. In the event of severe injury to the head, even the head hair starts to fall. 
  6. In addition, abnormal hair follicles (which appear in the hair follicles and the skin of the head) may also be the cause of hair fall. 
  7. Psychological habits such as hair follicles can cause hair loss and abrasion on the skin. 
  8. Another important reason is the use of excessive chemical shampoo that damages the hair and causes the hair to fall off. 
  9. The use of chemical conditioners and eating more medicines is also detrimental to the health of the hair. 
  10. Dryness of the skin of the head and worm of the skin also cause baldness. 
  11. Women also have hair loss from the womb and spinal cord. * Extreme anxiety, worry and grief can also damage the hair and skin.

Precautions:

  1. The following useful tips can help with hair protection.
  2. Avoid drying the hair from the dryer machine as it starts to weaken hair.
  3. Falling hair should be thoroughly washed or cleaned with a comb so that there is no further infection.
  4. Do not tie the hair breaker or the dying rubber band or clip, thus affecting the growth of the hair and cause the hair to start falling. 
  5. Wash the hair only twice a week with any herbal pure shampoo.

Treatment 

About fifty percent of patients begin to grow hair again within a year or two without treatment. Greater success can be achieved if the principles of public health are followed. For example, focus on food and the use of fruit vegetables and hair care should be taken. 

In addition, externally, arkim lipasynthus and troponium can be used as a honey tincture in a special oil. 

If hair fall is caused by persistent gum or anxiety, it is advisable to use phosphoric acid or asbestosia. In women, if the hair starts to fall off after pregnancy, use of lycos podium is very compulsory. 

If this treatment does not work, then the final solution involves surgical and laser treatment. In which an accredited doctor is treated with follicle transplantation and laser treatment.



گنج پن سے بچائو کا آسان علاج 

کلی طور پر یا جزوی طور انسانی جسم سے بالوں کا گرنا گنج پن کہلاتا ہے۔ یہ مہلک مرض آہستہ آہستہ سلسلہ وار بڑھتا ہے۔ ایک عام اندازے کے مطابق روزانہ ایک سو کے قریب ہمارے جسم کے بال ٹوٹتے یا گرتے ہیں۔ جبکہ ایک سر کی اوسط جلد میں تقریباً ایک لاکھ بال ہوتے ہیں اور ہر بال کی اوسطاً عمر چار سال ہوتی ہے۔ اس مدت کے دوران ہر بال ایک ماہ میں تقریباً آدھا انچ بڑھتا ہے۔ عام طور پر پانچویں سال میں یہ بال گر جاتا ہے اور پھر چھ ماہ کے دوران اس کی جگہ دوسرا نیا بال آجاتا ہے۔ موروثی یا مکمل گنجے پن سے عورتوں کی نسبت مرد زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔ تقریباً پچیس فیصد مرد تیس سال کی عمر میں گنجے ہونا شروع ہو جاتے ہیں اور تقریباً دو تہائی بال گر جاتے ہیں یا پچاس سے ساٹھ سال کی عمر میں مکمل طور پر گنجے ہو جاتے ہیں۔

گنجا پن کی وجوہات۔ 


 بالوں کے گرنے یا ٹوٹنے کی درج ذیل وجوہات ہیں۔ 

بالوں کے گرنے کی پہلی وجہ تو عمر کا بڑھ جاتا ہے یعنی یہ ایک فطری عمل ہوتا ہے کہ بوڑھے ہونے پر بال ساتھ چھوڑ جاتےہیں۔ 

 ہارمون کی کمی یا زیادتی سے بھی بال گرنا شروع ہو جاتے ہیں۔ 

 مردوں میں ہارمون کے مناسب طور پر کام نہ کرنے سے یہ بیماری لاحق ہو سکتی ہے۔ 

 خاندانی یا موروثی گنجا پن یعنی خاندانوں میں یہ بیماری بہت زیادہ ہوتی ہے اور جینز کے ذریعے ماں باپ سے اولاد میں منتقل ہو جاتی ہے۔ 

 کسی حادثے میں سر پر شدید چوٹ پر جل جانے سے بھی سر کے بال گرنا شروع ہو جاتے ہیں۔ 

 علاوہ ازیں غیر معمولی بالچر (جس میںگج کے ٹکڑے داڑھی بھنوئوں اور سر کی جلد میں ظاہر ہوتے ہیں) بھی بالوں کے گرنے کی وجہ ہو سکتی ہے۔ 

 نفسیاتی عادات جیسے بالوں کے گا ہے بگا ہے کھنچنا اور سر کی جلد کو بلا وجہ رگڑنے سے بال کمزور ہو سکتے ہیں۔ 

 اس کے علاوہ ایک اور اہم وجہ سے زیادہ کیمیکل والے شیمپو کا استعمال بالوں کو نقصان پہنچا تا ہے اور بال گرنا شروع ہو جاتےہیں۔ 

 کیمیائی کنڈیشنر کا استعمال اور زیادہ ادویات کھانا بھی بالوں کی صحت کیلئے مضر ہوتا ہے۔ 

 سر کی جلد کی خشکی اور سر کی جلد کا کیڑا بھی گنجا پن کا سبب بنتے ہیں۔ 

 عورتوں میں بچہ وانی اور رسولی وغیرہ سے بھی بال گرنا شروع ہو جاتےہیں۔

 زیادہ پریشانی، سوچ اور غم بھی بالوں کو اور جلد کو نقصان دیتے ہیں۔


احتیاطی تدابیر۔ 


 درج ذیل مفید ٹوٹکے بالوں کی حفاظت میں معاون ثابت ہو سکتے ہیں۔ 

 بالوں کو ڈرائیر مشین سے ڈرائی کرنے سے پرہیز کریں کیونکہ اس طرح بال کمزور ہو کر گرنا شروع ہو جاتے ہیں۔ 

 گرتے ہوئے بالوں کو اچھی طرح دھو یا جائے یا کنگھی سے صاف کر دیا جائے تاکہ مزید انفکشن نہ ہو۔ 

 بالوں کی توڑنے یا مورنے والے ربڑبینڈ یا کلپ وغیرہ سے نہ باندھیں اس طرح بالوں کی نشوونما متاثر ہوتی ہے اور بال گرنا شروع ہو جاتے ہیں۔ 

 کسی ہربل خالص شیمپو سے بالوں کو ہفتہ میں صرف دو بار دھوئیں۔

علاج 

تقریباً پچاس فیصد مریضوں کے بال بغیر علاج کے ایک یا دو سا ل کے عرصے مٰں دوبارہ اُگنا شروع ہو جاتے ہیں۔ اگر عام صحت کے اصولوں پر عمل کیا جائے تو کافی حد تک کامیابی حاصل کی جا سکتی ہے۔ مثلاً خوراک پر توجہ دی جائے اور پھلوں سبزیوں کا استعمال کیا جائے اور بالوں کی صفائی کا خاص خیال رکھا جائے۔ 

اس کے علاوہ بیرونی طور پر ارکیم لپاسیانوتھس اور ٹروپیونم کو مدر ٹنکچ کے طور پر کسی خاص تیل میں ملا کر استعمال کیا جا سکتا ہے۔ 

اگر بالوں کا گرنا مسلسل گم یا پریشانی کی وجہ سے ہو تو فاسفورک ایسڈ یا ابرگریسیا استعمال کرنے سے افاقہ ہو جاتا ہے۔ عورتوں میں اگر حمل کے بعد بال گرنا شروع ہو جائیں تو لائیکو پوڈیم استعمال کریں نہایت مجرب ہے۔ 

اس علاج سے اگر افاقہ نہ ہوتو تب آخری حل میں سرجیکل اور لیزر علاج کا مرحلہ آتا ہے۔ جس میں کسی مستند ڈاکٹر سے فولیکل ٹرانسپلانٹیشن اور لیزر کے ذریعے علاج کروایا جا تا ہے۔






Post a Comment

0 Comments