Medical Aspects of Coconut River "Coconut River"


Other names:

Its tree Coconut. Hindi is a form of shape and duplicate fruits look twin. Its coconut is like three cats, but its third poster is mixed with nausea and it is fat, but very tight from coconut, it reduces the amount of fat in the brain. Fresh mourning sweet and white, whereas the old mughal color is yellow and it is very tasty. 


Location Birth:  Near the island's tent. 

Mood:  Mixture

Functions:

Smash the cloak, heat heat and moisture.

Use

The coconut river mostly cures the disease with lonely or other diabetes in the skin. "It is also useful for being asleep as it is due to the body, as long as it exists within the body, it keeps the pot. The effect of all poisoning is not overwhelmed. Snake Bukhari, while passing on the location of frog and other animals, makes inflammation farewell away and poison, because this temperature causes chronic diseases, so in the Jawahar seal also Cannes embrace the bulgium primarily in the form of fatigue.


ناریل دریائی "نارجیل دریائی" کے طبی خواص


دیگر نام
اس کا درخت ناریل۔ ہندی کے ہم شکل ہوتا ہے اور دودو پھل جڑواں لگتے ہیں۔ ناریل کی طرح اس کے پھل کے تین پوست ہوتے ہیں لیکن اس کا تیسرا پوست مغز کے ساتھ ملا رہتا ہے اور یہ ناریل سے کچھ موٹا لیکن نہایت سخت ہوتا ہے اس کے مغز میں روغن کم ہوتا ہے۔ تازہ مغز میٹھا اور سفید جبکہ پرانا مغز رنگت میں زردی مائل اور مزہ میں قدرے تلخ ہوتا ہے۔

مقام پیدائش
جزیرہ نما خط استوا کے قریب۔

مزاج
مرکب القویٰ۔

افعال
دافع تپ وسوداوی، منعش حرارت غزیزی دافع ہیضہ اور تریاق سموم۔


استعمال
نارجیل دریائی کو زیادہ تر مرض ہیضہ میں تنہا یا دیگر ادویہ کے ہمراہ گلاب میں گھس کر پلاتے ہیں "تریاق سموم ہونے کی وجہ سے اس کا پلانا بھی مفید ہے کیونکہ جب تک بدن کے اندر سمیت موجود ہوتی ہے یہ قے لاتا رہتا ہے۔ یہاں تک کے تمام زہر کا اثر زائل نہ ہو جائے۔ سانپ بچھو بھڑ زنبور اور دیگر حیوانات کے مقام گزیدہ پر طلائ کرنے سے سوزش کو دور اور زہر کو دافع کرتا ہے چونکہ یہ حرارت غیریزی کو برانگیختہ کرتا ہے لہذا جواہر مہر میں بھی اس کو شامل کرتے ہیں۔ تپ بلغمی وسوداوی کی ابتدائ میں گھس کر پلاتے ہیں۔

Post a Comment

0 Comments